Dr Shehnaz Shoro

 

 

 

 

 

حوروں کے پستان ناپتے مولوی ۔۔۔۔!

ڈاکٹر شہناز شورو

17 نومبر 1967  یوم پیدائش

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آغا نیاز مگسی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنڌي، اردو ۽ انگريزي زبانن ۾ لکندڙ سنڌ جي مشهور افسانا نگار، ليکڪا، مضمون نگار، مترجم شھناز شورو 17 نومبر 1967ع تي ميرپور خاص ۾ جنم ورتو، ھن شروعاتي تعليم ميرپور خاص ۽ ماسٽرس انگلش ڊپارٽمينٽ سنڌ يونيورسٽي ڄامشورو مان ڪئي، تعليم مڪمل ڪرڻ کانپوءِ تعليم کاتي ۾ ليڪچرار مقرر ٿي، ھن پوءِ ناٽنگھم يونيورسٽي برطانيا مان انگلش پڙھائڻ جي تعليم ۽ نيويارڪ يونيورسٽيءَ مان پي ايڇ ڊي ڪئي آهي، شھناز شورو جو شمار ملڪ جي وڏن افسانا نگارن ۾ ٿئي ٿو، ھن مضمون به لکيا آهن، ته ترجما به ڪيا آهن، سندس ڪيترائي ڪتاب ڇپيل آهن، پروفيسر شھناز شورو سنڌ جي سيڪريٽري تعليم اڪبر لغاري جي گهر واري آهي..

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نامور پاکستانی ادیبہ، مصنفہ، ماہر تعلیم اور نظم گو شاعرہ  پروفیسر ڈاکٹر شہناز شورو صاحبہ 17 نومبر.  1967 میں میر پور خاص سندھ میں پیدا ہوئیں۔ ابتدائی تعلیم میر پور خاص میں حاصل کرنے کے بعد انہوں نے  سندھ یونیورسٹی جام شورو سے انگلش میں ایم اے کیا جس کے بعد انہوں نے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے لیے بیرون ممالک کا سفر اختیار کیا ۔  انہوں ناٹنگھم یونیورسٹی برطانیہ سے انگریزی پڑھانے کی تعلیم حاصل کی جبکہ نیو یارک یونیورسٹی امریکہ سے ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی ۔ اعلیٰ تعلیم مکمل کرنے کے بعد سندھ کے محکمہ تعلیم میں بطور لیکچرار ان کی تعیناتی ہوئی۔ وہ آجکل پروفیسر کی حیثیت سے اپنے فرائض سر انجام دے رہی ہیں ۔ سندھ کے معروف ادیب اور بیورو کریٹ اکبر لغاری صاحب سے ان کی شادی ہوئی ہے۔  پروفیسر شہناز شورو تین زبانوں سندھی ،اردو اور انگریزی میں افسانے، مضامین ، مقالے اور آزاد نظم لکھتی ہیں اور ترجمے بھی کرتی ہیں ان کی نصف درجن کتابیں شائع ہو چکی ہیں جن میں “نظر نظر کی بات” زوال دکھ”  ” درد جو معراج”  اور ترجمے شامل ہیں ۔ 

آزاد نظم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عورت کی کوکھ سے نکلے

حوروں کے پستان ناپتے مولوی

بد کردار حاکموں کو نیکی کی سند بانٹنے والے مولوی

ہمارے لباس ہمارے کردار جانچتے مولوی

درباری مولوی، پیشہ ور مولوی

بھوک سے بلکتے انسان دیکھ کر

جن کی سوچ جاگتی نہیں

زندانوں میں بے گناہ جسم دیکھ کر

جن کو نظر آتے نہیں

ننھی بچیوں کے جسموں کو نوچتے بھیڑیے

جن کی زبان چپ ہے دیکھ کر

معصوم بچوں کے جسموں کو چیرتے درندے

مگر ہم بے پردہ عورتیں

خدا کا عذاب ہیں

ہم جینز پہن کر کام کرتی مزدور عورتیں

وبا کا سبب ہیں

پروردگار اپنے خلیفے کو رسی ڈال

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Copyright © All rights reserved. | Designed by K-soft.
error: Content is protected !!